Mustafa Khairul Wara Ho Lyrics Urdu/English

Mustafa Khairul Wara Ho Lyrics

Mustafa Khairul Wara Ho Lyrics

By Ala Hazrat Imam Ahmed Raza Khan

Mustafa Khairul Wara Ho Full Audio By Rafiue Raza Qadri

Mustafa khairul wara ho
Sarwar e har do saraa ho

Apne achchon ka tasadduq
Hum badon ko bhi nibaaho

Kis ke phir ho kar rahein hum
Gar tumhin hum ko nah chaaho

Bad hansein tum un ki khaatir
Raat bhar ro ow karaho

Bad karein har dam buraayi
tum kaho un kaa bhalaa ho

Mustafa khairul wara ho
Sarwar e har do saraa ho

Hum wohi naashustah roo hain
tum wohi behr e ‘ataa ho

Hum wohi shaayaane rad hain
tum wohi shaan e sakhaa ho

Hum wohi be sharm o bad hain
tum wohi kaan e hayaa ho

Hum wohi nang e jafaa hain
tum wohi jaan e wafaa ho

Mustafa khairul wara ho
Sarwar e har do saraa ho

Hum wohi qaabil sazaa ke
tum wohi rahm e Khuda ho

Charkh badl e dahr badle
tum badalne sey waraa ho

Ab humein hon sahw haa shaa
Aisi bhoolon sey judaa ho

Umr bhar toh yaad rakkha
Waqt par kya bhoolnaa ho

Mustafa khairul wara ho
Sarwar e har do saraa ho

Waqt e paidaaish nah bhoole
Kaifayansaa’k^cxm qaza ho

Yeh bhi Maula ‘arz kardun
Bhool agar jaao toh kya ho

Woh ho jo tum par giraan hay
Woh ho jo hargiz nah chaaho

Woh ho jis ka naam lete
Dushmanon ka dil buraa ho

Mustafa khairul wara ho
Sarwar e har do saraa ho

Woh ho jis ke rad ki khaatir
Raat din waqf e du’a ho

Mar miten barbaad bande
Khanah aabaad aag ka ho

Shaad ho iblees mal’oon
Gham kisey iss qahr ka ho

tum ko ho wallah tum ko
Jaano dil tum par fidaa ho

Mustafa khairul wara ho
Sarwar e har do saraa ho

tum ko gham sey haq bachaaye
Gham ‘adoo ko jaan gazaa ho

tum sey gham ko kya ta’alluq
Be kason ke ghamzida ho

Haq duroodein tum pe bheje
tum mudaam us ko saraa ho

Woh ‘ataa de tum ‘ataa lo
Woh wohi chaahe jo chaaho

Mustafa khairul wara ho
Sarwar e har do saraa ho

Bar to ouw paashad to bar maa
Taa abad yeh silsilah ho

Kyun Raza mushkil sey dariye
Jab Nabi mushkil kusha ho

Mustafa khairul wara ho
Sarwar e har do saraa ho

مصطفٰی خیرُالْوَرٰے ہو

سرورِ ہر دوسَرا ہو


اپنے اچھوں کا تَصَدُّق

ہم بدوں کو بھی نباہو


کس کے پھر ہو کر رہیں ہم

گر تمہیں ہم کو نہ چاہو


بَد ہنسیں تم اُن کی خاطر

رات بھر رُوؤ کراہو


بد کریں ہر دم برائی

تم کہو ان کا بھلا ہو


ہم وہی ناشُسْتَہ رُو ہیں 

تم وہی بحرِ عطا ہو


ہم وہی شایانِ رَد ہیں 

تم وہی شانِ سخا ہو


ہم وہی بے شرم و بد ہیں 

تم وہی کانِ حیا ہو


ہم وہی نَنگِ جَفا ہیں 

تم وہی جانِ وَفا ہو


ہم وہی قابل سزا کے

تم وہی رحمِ خدا ہو


چَرخ بدلے دَہر بدلے

تم بدلنے سے وَرا ہو


اب ہمِیں ہوں سَہْو حاشا

ایسی بھولوں سے جدا ہو


عمر بھر تو یاد رکھا

وقت پر کیا بھولنا ہو


وقتِ پیدایِش نہ بھولے

کَیْفَ یَنْسٰی کیوں قضا ہو


یہ بھی مولیٰ عرض کر دوں 

بھول اگر جاؤ تو کیا ہو


وہ ہو جو تم پر گِراں ہے

وہ ہو جو ہرگز نہ چاہو


وہ ہو جس کا نام لیتے

دشمنوں کا دل برا ہو


وہ ہو جس کے رَد کی خاطر

رات دن وَقْفِ دُعا ہو


مر مٹیں برباد بندے

خانہ آباد آگ کا ہو


شاد ہو اِبلیس مَلْعُوں 

غم کسے اس قَہر کا ہو


تم کو ہو وَاللہ تم کو

جان و دل تم پر فدا ہو


تم کو غم سے حق بچائے

غم عَدُوّ کو جاں گزا ہو


تم سے غم کو کیا تعلق

بیکسوں کے غم زِدا ہو


حق درُودیں تم پہ بھیجے

تم مُدام اس کو سراہو


وہ عطا دے تم عطا لو

وہ وہی چاہے جو چاہو


بر تو اُو پاشَدْ تو بر ما

تا اَبد یہ سِلسلہ ہو


کیوں رضاؔ مشکل سے ڈریئے

جب نبی مشکل کُشا ہو

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *