Lahad Me Ishq e Rukh e Shah Ka Daag Leke Chale Lyrics Urdu/English

Lahad Me Ishq e Rukh e Shah Ka Daag Leke Chale Lyrics

Lahad Me Ishq e Rukh e Shah Ka Daag Leke Chale Lyrics

By Ala Hazrat Imam Ahmed Raza Khan

Lahad me ishq e rukh e shah ka daag leke chale
Andheri raat suni thi charaagh ley ke chale

Tere gulaamon ka naqsh e qadam hai raah e Khuda
Woh kya behek sake jo yeh suraagh ley ke chale

Jinaan banegi muhibbaan e chaar yaar ki qabr
Jo apne seene mein ye chaar baagh le ke chale

Gaye, ziyaarat e dar ki, sad aah waapas aaye
Nazar ke ashk piche dil ka daagh le ke chale

Madeene jaan e jinaan o jahaan hai wo sun lein
Jinhein junoon e jinaan sooye zaagh le ke chale

Lahad me ishq e rukh e shah ka daag leke chale
Andheri raat suni thi charaagh ley ke chale

Tere sahaaab e sukhan se na nam ke nam se bhi kam
Baleegh behr e balaaghat balaagh le ke chale

Huzoor e Taibah se bhi koi kaam barh kar hai
ke jhoote heele makr o faraagh le ke chale

Tumhare wasf e jamaal o kamaal mein jibraeel
Muhaal hai ke majaal o masaagh le ke chale

Gilah nahin hai mureed rasheed e shaitaan se
Keh us ke wusa’at e ilmi ka laagh le ke chale

Lahad me ishq e rukh e shah ka daag leke chale
Andheri raat suni thi charaagh ley ke chale

Har eik apne bare ki barayi karta hai
Har eik mugbachah mugh ka ayaagh le ke chale

Magar Khuda pe jo dhabba darogh ka thopa
Ye kis la’een ki ghulaami ka daagh le ke chale

Wuqoo’ e kizb ke ma’ni durust aur qudoos
Hiye ki phoote ‘ajab sabz baagh le ke chale

Jahaan mein koi bhi kaafir saa kaafir aisaa hai
Ke apne Rab pe safaahat ka daagh le ke chale

Lahad me ishq e rukh e shah ka daag leke chale
Andheri raat suni thi charaagh ley ke chale

Pari hai andhe ko ‘aadat keh shorbe hi se khaaye
Bater haath nah aayi to zaagh le ke chale

Khabees behr e khabeesah khabeesah behr e khabees
Ke saath jins ko baazo o kulaagh le ke chale

Jo deen kawwon ko de baitthe un ko yaksaan hai
Kulaagh le ke chale yaa ulaagh le ke chale

Raza kisi sag e Taibah ke paaon bhi choome
Tum aur aah keh itnaa dimaagh le ke chale

Lahad me ishq e rukh e shah ka daag leke chale
Andheri raat suni thi charaagh ley ke chale

لَحد میں عشقِ رخِ شہ کا داغ لے کے چلے

اندھیری رات سنی تھی چراغ لے کے چلے


تِرے غلاموں کا نقشِ قدم ہے راہِ خدا

وہ کیا بہک سکے جو یہ سُراغ لے کے چلے


جِناں بنے گی مُحِبّانِ چار یار کی قبر

جو اپنے سینہ میں یہ چار باغ لے کے چلے


گئے، زیارتِ در کی، صَد آہ واپس آئے

نظر کے اشک پچھے دل کا داغ لے کے چلے


مدینہ جانِ جِنان و جہاں ہے وہ سن لیں 

جنھیں جنونِ جِناں سوئے زاغ لے کے چلے


تِری سَحابِ سخن سے نہ نَم کہ نم سے بھی کم

بَلِیغْ بہرِ بلاغت بَلاغ لے کے چلے


حضورِ طیبہ سے بھی کوئی کام بڑھ کر ہے

کہ جھوٹے حیلۂِ مکر و فَراغ لے کے چلے


تمہارے وصفِ جمال و کمال میں جبریل

مُحال ہی کہ مجال و مَساغ لے کے چلے


گلہ نہیں ہے مریدِ رشیدِ شیطاں سے

کہ اس کے وسعتِ علمی کا لاغ لے کے چلے


ہر ایک اپنے بڑے کی بڑائی کرتا ہے

ہر ایک مُغْبَچہ مُغ کا اَیاغ لے کے چلے


مگر خدا پہ جو دھبَّہ دَروغ کا تھوپا

یہ کس لعیں کی غلامی کا داغ لے کے چلے


وُقوعِ کِذب کے معنیٖ درست اور قُدّوس

ہِیئے کی پھوٹے عجب سبز باغ لے کے چلے


جہاں میں کوئی بھی کافر سا کافر ایسا ہے

کہ اپنے ربّ پہ سَفاہَت کا داغ لے کے چلے


پڑی ہے اندھے کو عادت کہ شوربے ہی سے کھائے

بٹیر ہاتھ نہ آئی تو زاغ لے کے چلے


خبیث بہرِ خبیثہ خبیثہ بہرِ خبیث

کہ ساتھ جنس کو باز و کُلاغ لے کے چلے


جو دین کَؤوں کو دے بیٹھے ان کو یکساں ہے

کُلاغ لے کے چلے یا اُلاغ لے کے چلے


رضاؔ کسی سگِ طیبَہ کے پاؤں بھی چُومے

تم اور آہ کہ اتنا دِماغ لے کے چلے

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *