Kabe Ke Badrudduja Tum Pe Karoron Durood Lyrics Urdu/English

Kabe Ke Badrudduja Tum Pe Karoron Durood Lyrics

Kabe Ke Badrudduja Tum Pe Karoron Durood Lyrics

By Ala Hazrat Imam Ahmed Raza Khan

Kabe Ke Badrudduja Tum Pe Karoron Durood Full Audio By Rafiue Raza Qadri

Kabe ke badrudduja tum pe karoron durood
Taiba ke shamsudduha tum pe karoron durood

Shaafa e roz e jazaa tum pe karoron durood
Daafa  e jumlah balaa tum pe karoron durood

Jaan o dil e asfiya tum pe karoron durood
Aab o gil e Ambiya tum pe karoron durood

Laayeein to yeh doosraa dawsaraa jis ko mila
Kooshak e ‘arsh o danaa tum pe karoron durood

Aur koi ghaib kya tum se nihaan ho bhala
Jab naa Khuda hi chupaa tum pe karoron durood

Kabe ke badrudduja tum pe karoron durood
Taiba ke shamsudduha tum pe karoron durood

Toor pe jo sham’a thaa chaand thaa saa’eer kaa
Nayyar e faaraan huwa tum pe karoron durood

Dil karo thanda mera woh kaf e paa chaand saa
Seeney pe rakh do zaraa tum pe karoron durood

Zaat hui intikhaab wasf huwe laajawaab
Naam huwa Mustafa tum pe karoron durood

Ghaayeat o ‘illat sabab bahr e jahaan tum ho sab
tum se banaa tum binaa tum pe karoron durood

Kabe ke badrudduja tum pe karoron durood
Taiba ke shamsudduha tum pe karoron durood

Tum se jahaan ki hayaat tum se jahaan kaa sabaat
Asl se hay zil bandhaa tum pe karoron durood

Maghz ho tum aur post aur hain baahir ke dost
Tum ho daroon e saraa tum pe karoron durood

Kya hain jo be had hain laus tum toh ho ghais aur ghaus
Cheentte mein hoga bhalaa tum pe karoron durood

Tum ho hafeez o mughees kya hay woh dushman khabees
Tum ho toh phir khauf kya tum pe karoron durood

Kabe ke badrudduja tum pe karoron durood
Taiba ke shamsudduha tum pe karoron durood

Woh shab e meraj raaj woh saf e mehshar ka taaj
Koi bhi aisaa huwa tum pe karoron durood

Nuhta falaahal falaah ruhta faraahal maraah
Udliya ‘udal hanaa tum pe karoron durood

Jaan o jahaan e maseeh daad keh dil hay jareeh
Nabzein chattin dam chalaa tum pe karoron durood

Uf woh rah e sanglaakh aah yeh paa shaakh shaakh
Aaye mere Mushkil Kusha tum pe karoron durood

Kabe ke badrudduja tum pe karoron durood
Taiba ke shamsudduha tum pe karoron durood

Tum se khulaa baab e jood tum se hay sab kaa wujood
Tum se hay sab ki baqaa tum pe karoron durood

Khastah hoon aur tum ma’aaz basta hoon aur tum malaaz
Aage jo shah ki Raza tum pe karoron durood

Garche hain behad kusoor tum ho ‘afuw o ghafoor
Bakhsh do jurm o khataa tum pe karoron durood

Mehr e Khuda noor noor dil hay siyah din hay door
Shab mein karo chaandnaa tum pe karoron durood

Kabe ke badrudduja tum pe karoron durood
Taiba ke shamsudduha tum pe karoron durood

Tum ho shaheed o baseer aur main gunah par dileer
Khol do chashm e hayaa tum pe karoron durood

Cheent tumhaari sahar chhoot tumhari qamar
Dil mein racha do ziya tum pe karoron durood

Tum se Khuda ka zuhoor uss se tumhaara zuhoor
Z/mhay yeh woh In huwa tum pe karoron durood

Be hunar o be tameez kis ko huwe hain ‘azeez
Eik tumhare siwaa tum pe karoron durood

Kabe ke badrudduja tum pe karoron durood
Taiba ke shamsudduha tum pe karoron durood

Aas hay koi nah paas ek tumhari hay aas
Bas hay yahi aasraa tum pe karoron durood

Taa ram e aa’la ka arsh jis kaf e paa kaa hay farsh
Aankhon pe rakh do zaraa tum pe karoron durood

Kehne ko hain ‘aam o khaas eik tumhin ho khalaas
Band se kar do rihaa tum pe karoron durood

Tum ho shifaa e maraz khalq e Khuda khud gharaz
Khalq ki haajat bhi kya tum pe karoron durood

Kabe ke badrudduja tum pe karoron durood
Taiba ke shamsudduha tum pe karoron durood

Aah woh raah e siraat bandon ki kitni bisaat
Al madad aaye rehnumaa tum pe karoron durood

Be adab o bad lihaaz kar nah sakaa kuch hifaaz
Afw pe bhoola raha tum pe karoron durood

Law teh e daaman keh sham’a jhonkon mein hay roz e jam’a
Aandhiyon se hashr utthaa tum pe karoron durood

Seena keh hay daagh daagh keh do kare baagh baagh
Taiba se aa kar sabaa tum pe karoron durood

Kabe ke badrudduja tum pe karoron durood
Taiba ke shamsudduha tum pe karoron durood

Gesu o qad Laam Alif kar do balaa munsarif
Laa ke teh e taigh e Zaatum pe karoron durood

Tum ney ba rang e falaq jaib e jahaan kar ke shaq
Noor ka tarrka kiya tum pe karoron durood

Nawbat e dar hain falak khaadim e dar hain malak
Tum ho jahaan Baadshaa tum pe karoron durood

Khilq tumhaari jameel khulq tumhaara jaleel
Khalq tumhaari gadaa tum pe karoron durood

Kabe ke badrudduja tum pe karoron durood
Taiba ke shamsudduha tum pe karoron durood

Taibah ke maah e tamaam jumlah Rusul ke imaam
Naw shah e milk e Khuda tum pe karoron durood

Tum se jahaan ka nizaam tum pe karoron salaam
Tum pe karoron sanaa tum pe karoron durood

Tum ho jawaad o kareem tum ho rauf o raheem
Bheek ho daata ‘ataa tum pe karoron durood

Khalq ke haakim ho tum rizq ke qaasim ho tum
Tum se milaa jo milaa tum pe karoron durood

Kabe ke badrudduja tum pe karoron durood
Taiba ke shamsudduha tum pe karoron durood

Naafe’ o daafe’ ho tum shaafe’ o raafe’ ho tum
Tum se has afzoon Khuda tum pe karoron durood

Shaafi o naafi ho tum kaafi o waafi ho tum
Dard ko kardo dawaa tum pe karoron durood

Jaayeein nah jab tak ghulaam khuld hay sab par haraam
Milk toh hay aap ka tum pe karoron durood

Mazhar e Haq ho tumhin muzhir e Haq ho tumhin
Tum mein hay zaahir Khuda tum pe karoron durood

Kabe ke badrudduja tum pe karoron durood
Taiba ke shamsudduha tum pe karoron durood

Zor deh e naarsaan takya gahe bekasaan
Baadshah e maa waraa tum pe karoron durood

Barse karam ki bharan phoolein ni’am ke chaman
Aisi chaalaa do hawaa tum pe karoron durood

Ik taraf a’daa e deen eik taraf haasideen
Bandah hay tanhaa shahaa tum pe karoron durood

Kyun kahoon be kas hoon main kyun kahoon be bas hoon main
Tum ho mein tum par fidaa tum pe karoron durood

Kabe ke badrudduja tum pe karoron durood
Taiba ke shamsudduha tum pe karoron durood

Gandey nikammey kameen mehnge hon koree ke teen
Kaun humein paalta tum pe karoron durood

Baat na dar ke kahin ghaat nah ghar ke kahin
Aise tumhein paalna tum pe karoron durood

Aison ko ne’mat khilaao doodh ke sharbat pilaao
Aison ko aisi ghizaa tum pe karoron durood

Girne ko hoon rok lo ghotah lage haath do
Aison par aisi ‘ataa tum pe karoron durood

Kabe ke badrudduja tum pe karoron durood
Taiba ke shamsudduha tum pe karoron durood

Apne khataawaaron ko apne hi daaman mein lo
Kaun kare yeh bhalaa tum pe karoron durood

Kar ke tumhare gunaah maangein tumhaari panaah
tum kaho daaman mein aa tum pe karoron durood

Kar do aduw ko tabaah haasidon ko roo baraah
Ahl e wilaa ka bhalaa tum pe karoron durood

Hum ne khataa mein nah ki tum ne ‘ataa mein nah ki
Koi kami Sarwaraa tum pe karoron durood

Kabe ke badrudduja tum pe karoron durood
Taiba ke shamsudduha tum pe karoron durood

Kaam ghazab ke kiye us peh hay Sarkaar se
Bandon ko chashm e Raza tum pe karoron durood

Aankh ataa kijiye us mey ziya dijiye
Jalwah qareeb aa gaya tum pe karoron durood

Kaam woh ley lijiye tum ko jo raazi kare
Theek ho naam e Raza tum pe karoron durood

Kabe ke badrudduja tum pe karoron durood
Taiba ke shamsudduha tum pe karoron durood

کعبہ کے بَدرالدُّجی تم پہ کروروں درود

طیبہ کے شمس الضحی تم پہ کروروں درود


شافَعِ روزِ جزا تم پہ کروروں درود

دافعِ جملہ بلا تم پہ کروروں درود


جان و دلِ اَصفیا تم پہ کروروں درود

آب و گِلِ اَنبیا تم پہ کروروں درود


لائیں تو یہ دُوسرا دَوسَرا جس کو ملا

کُوشکِ عرش و دَنیٰ تم پہ کروروں درود


اور کوئی غیب کیا تم سے نِہاں ہو بھلا

جب نہ خدا ہی چھپا تم پہ کروروں درود


طور (کوہ کلیم) پہ جو شمع تھا چاند تھا ساعیر (کوہ مسیح) کا

نَیِّر فاراں ہوا تم پہ کروروں درود


دل کرو ٹھنڈا مِرا وہ کفِ پا چاند سا

سینہ پہ رکھ دو ذرا تم پہ کروروں درود


ذات ہوئی اِنتِخاب وَصف ہوئے لاجواب

نام ہوا مُصطَفیٰ تم پہ کروروں درود


غایَت و عِلَّت سبب بہرِ جہاں تم ہو سب

تم سے بَنا تم بِنا تم پہ کروروں درود


تم سے جہاں کی حیات تم سے جہاں کا ثَبات

اصل سے ہے ظِلّ بندھاتم پہ کروروں درود


مَغز ہو تم اور پُوست اور ہیں باہَرکے دوست

تم ہو دَرُونِ سَرا تم پہ کروروں درود


کیا ہیں جو بیحد ہیں لَوث تم تو ہو غَیْث اور غوث

چھینٹے میں ہو گا بھلا تم پہ کروروں درود


تم ہو حفیظ و مُغِیث کیا ہے وہ دشمن خبیث

تم ہو تو پھر خوف کیا تم پہ کروروں درود


وہ شبِ معراج راج وہ صفِ محشر کا تاج

کوئی بھی ایسا ہوا تم پہ کروروں درود


نُحْتَ فَلَاحَ الْفَلاحْ رُحْتَ فَرَاحَ الْمَرَاحْ

عُدْ لِیَعُوْدَ الْھَنا تم پہ کروروں درود


جان و جہانِ مسیح داد کہ دل ہے جَرِیح

نبضیں چھٹیں دم چلا تم پہ کروروں درود


اُف وہ رہِ سَنگلاخ آہ یہ پا شاخ شاخ

اے مِرے مشکل کُشا تم پہ کروروں درود


تم سے کھلا بابِ جُود تم سے ہے سب کا وُجُود

تم سے ہے سب کی بَقا تم پہ کروروں درود


خستہ ہوں اور تم مَعاذ بستہ ہوں اور تم مَلاذ

آگے جو شَہ کی رضا تم پہ کروروں درود


گرچہ ہیں بے حد قصور تم ہو عَفُوّ و غَفور

بخش دو جُرم و خطا تم پہ کروروں درود


مِہْرِ خدا نور نور دل ہے سِیَہ دن ہے دُور

شب میں کرو چاندنا تم پہ کروروں درود


تم ہو شہید و بَصیر اور میں گُنَہ پر دَلِیر

کھول دو چشمِ حیا تم پہ کروروں درود


چھینٹ تمہاری سحر چھوٹ تمہاری قَمر

دل میں رچا دو ضِیا تم پہ کروروں درود


تم سے خدا کا ظُہور اُس سے تمہارا ظہور

لِمْ ہے یہ وہ اِنْ ہوا تم پہ کروروں درود


بے ہنر و بے تمیز کس کو ہوئے ہیں عزیز

ایک تمہارے سوا تم پہ کروروں درود


آس ہے کوئی نہ پاس ایک تمہاری ہے آس

بس ہے یہی آسرا تم پہ کروروں درود


طارمِ اعلیٰ کا عرش جس کَفِ پا کا ہے فرش

آنکھوں پہ رکھ دو ذرا تم پہ کروروں درود


کہنے کو ہیں عام و خاص ایک تمہیں ہو خَلاص

بند سے کر دو رِہا تم پہ کروروں درود


تم ہو شِفائے مَرض خَلقِ خدا خود غَرض

خَلق کی حاجت بھی کیا تم پہ کروروں درود


آہ وہ راہِ صِراط بندوں کی کتنی بِساط

اَلْمَدد اے رہنما تم پہ کروروں درود


بے ادب و بد لِحاظ کر نہ سکا کچھ حِفاظ

عَفْو پہ بُھولا رہا تم پہ کروروں درود


لو تہِ دامن کہ شمع جھونکوں میں ہے روزِ جمع

آندھیوں سے حَشر اُٹھا تم پہ کروروں درود


سینہ کہ ہے داغ داغ کہہ دو کرے باغ باغ

طَیْبہ سے آ کر صَبا تم پہ کروروں درود


گِیْسُو و قَد لام اَلف کر دو بلا مُنْصَرف

لا کے تہِ تِیغِ “لَا” تم پہ کروروں درود


تم نے بَرَنگِ فلق جَیْبِ جہاں کر کے شَق

نور کا تڑکا کیا تم پہ کروروں درود


نَوبَتِ در ہیں فَلک خادمِ در ہیں مَلک

تم ہو جہاں بادشا تم پہ کروروں درود


خلق تمہاری جَمِیل خُلق تمہارا جَلِیل

خَلق تمہاری گدا تم پہ کروروں درود


طَیْبہ کے ماہِ تمام جُملہ رُسُل کے امام

نَوشہِ ملکِ خدا تم پہ کروروں درود


تم سے جہاں کا نظام تم پہ کروروں سلام

تم پہ کروروں ثَنا تم پہ کروروں درود


تم ہو جَواد و کریم تم ہو رَؤف و رَحیم

بھیک ہو داتا عطا تم پہ کروروں درود


خَلق کے حاکم ہو تم رزق کے قاسم ہو تم

تم سے ملا جو ملا تم پہ کروروں درود


نافع و دافع ہو تم شافع و رافع ہو تم

تم سے بس اَفزوں خدا تم پہ کروروں درود


شافی و نافی ہو تم کافی و وافی ہو تم

درد کو کر دو دوا تم پہ کروروں درود


جائیں نہ جب تک غلام خُلد ہے سب پر حرام

مِلک تو ہے آپ کا تم پہ کروروں درود


مَظْہَرِ حق ہو تمہیں مُظْہِرِ حق ہو تمہیں

تم میں ہے ظاہر خدا تم پہ کروروں درود


زور دہِ نا رَساں تکیہ گہِ بے کَساں

بادشہِ ما وَرا تم پہ کروروں درود


برسے کرم کی بھرن پھولیں نِعَم کے چمن

ایسی چلا دو ہوا تم پہ کروروں درود


اک طرف اَعدائے دیں ایک طرف حاسدیں 

بندہ ہے تنہا شہا تم پہ کروروں درود


کیوں کہوں بیکس ہوں میں کیوں کہوں بے بس ہوں میں 

تم ہو میں تم پر فدا تم پہ کروروں درود


گندے نکمّے کمین مہنگے ہوں کوڑی کے تین

کون ہمیں پالتا تم پہ کروروں درود


باٹ نہ در کے کہیں گھاٹ نہ گھر کے کہیں 

ایسے تمہیں پالنا تم پہ کروروں درود


ایسوں کو نعمت کھلاؤ دودھ کے شربت پلاؤ

ایسوں کو ایسی غذا تم پہ کروروں درود


گرنے کو ہوں روک لو غُوطہ لگے ہاتھ دو

ایسوں پر ایسی عطا تم پہ کروروں درود


اپنے خطا واروں کو اپنے ہی دامن میں لو

کون کرے یہ بھلا تم پہ کروروں درود


کر کے تمہارے گناہ مانگیں تمہاری پناہ

تم کہو دامن میں آ تم پہ کروروں درود


کر دو عَدُوّ کو تباہ حاسدوں کو رُو بَراہ

اہلِ وِلا کا بھلا تم پہ کروروں درود


ہم نے خطا میں نہ کی تم نے عطا میں نہ کی

کوئی کمی سَرْوَرا تم پہ کروروں درود


کام غضب کے کیے اس پہ ہے سر کار سے

بندوں کو چشمِ رضا تم پہ کروروں درود


آنکھ عطا کیجیے اس میں ضیا دیجیے

جلوہ قریب آ گیا تم پہ کروروں درود


کام وہ لے لیجیے تم کو جو راضی کرے

ٹھیک ہو نامِ رضاؔ تم پہ کروروں درود

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *