Badal Yaa Fard Jo Kaamil Hai Yaa Ghaus Lyrics Urdu/English

Badal Yaa Fard Jo Kaamil Hai Yaa Ghaus Lyrics

Badal Yaa Fard Jo Kaamil Hai Yaa Ghaus Lyrics

By Ala Hazrat Imam Ahmed Raza Khan

Badal yaa fard jo kaamil hai Yaa Ghaus
Tere hi dar se mustakmil hai Yaa Ghaus

Jo teri yaad se zaahil hai Yaa Ghaus
Wo zikrullah se ghaafil hai Yaa Ghaus

Anas sayyaaf se jaahil hai Yaa Ghaus
Jo tere fazl par saail hai Yaa Ghaus

Sukhan hain asfiyaa tu maghz e ma’ani
Badan hain auliya tu dil hai Yaa Ghaus

Agar wo jism e ‘irfaan hain to tu aankh
Agar woh aankh hain tu til hai Yaa Ghaus

Badal yaa fard jo kaamil hai Yaa Ghaus
Tere hi dar se mustakmil hai Yaa Ghaus

Uloohiyyat nabuwwat ke siwaa tu
Tamaam afzaal ka qaabil hai Yaa Ghaus

Nabi ke qadmon par hai juz e nabuwwat
Keh khatm is raah mein haail hai Yaa Ghaus

Uloohiyyat hi Ahmad ne nah paayi
Nabuwwat hi se tu ‘aatil hai Yaa Ghaus

Sahaabiyat huyi phir tabei’iyat
Bas aage Qaadiri manzil hai Yaa Ghaus

Badal yaa fard jo kaamil hai Yaa Ghaus
Tere hi dar se mustakmil hai Yaa Ghaus

Hazaaron taabei’ se toh fuzoon hai
Woh tabqa mujmalan faadhil hai Yaa Ghaus

Raha maidaan o shehrstaan e ‘irfaan
Tera ramna teri mehfil hai Yaa Ghaus

Yeh Chishti Soharwardi Naqshbandi
Har ek teri taraf maayil hai Yaa Ghaus

Teri chiriyaan hain tera daana paani
Tera mela teri mehfil hai Yaa Ghaus

Badal yaa fard jo kaamil hai Yaa Ghaus
Tere hi dar se mustakmil hai Yaa Ghaus

Unhein tu Qaadri bai’at hai tajdeed
Woh haan khaati jo mustabdil hai Yaa Ghaus

Qamar par jaise khur ka yoon tera qarz
Sab ahl e noor par faazil hai Yaa Ghaus

Ghalat kar dam toh waahib hai nah muqriz
Teri bakhshish tera naayil hai Yaa Ghaus

Koi kya jaane tere sar kaa rutba
ke talwa taaj e ahl e dil hai Yaa Ghaus

Badal yaa fard jo kaamil hai Yaa Ghaus
Tere hi dar se mustakmil hai Yaa Ghaus

Mashaaikh mein kisi ko tujh pey tafzeel
Ba hukm e auliya baatil hai Yaa Ghaus

Jahaan dushwaar ho wahm e musaawaat
Yeh jur’aat kis qadar haayil hai Yaa Ghaus

Tere khuddaam ke aagey hai ik baat
Jo aur aqtaab ko mushkil hai Yaa Ghaus

Use idbaar jo mudbir hai tujh se
Woh zee Iqbaal jo muqbil hai Yaa Ghaus

Khuda ke dar se hai matrood o makhzool
Jo teraa taarak o khaazil hai Yaa Ghaus

Badal yaa fard jo kaamil hai Yaa Ghaus
Tere hi dar se mustakmil hai Yaa Ghaus

Sitam kori wahaabi raafzi ki
ke hindu tak tera qaayil hai Yaa Ghaus

Woh kya jaanega fazl e Murtaza ko
Jo tere fazl ka jaahil hai Yaa Ghaus

Raza ke saamne ki taab kis mein
Falak waar us pey tera zil hai Yaa Ghaus

Badal yaa fard jo kaamil hai Yaa Ghaus
Tere hi dar se mustakmil hai Yaa Ghaus

بَدل یا فَرد جو کامل ہے یا غوث

تِرے ہی در سے مُسْتَکْمِل ہے یا غوث


جو تیری یاد سے ذاہِل ہے یا غوث

وہ ذِکرُاﷲ سے غافل ہے یا غوث


اَنَا السَّیَّاف سے جاہل ہے یا غوث

جو تیرے فضل پر صائل ہے یا غوث


سخن ہیں اَصفیا، تُو مَغزِ معنی

بدن ہیں اَولیا، تُو دل ہے یا غوث


اگر وہ جسمِ عِرفاں ہیں تو تُو آنکھ

اگر وہ آنکھ ہیں تو تِل ہے یا غوث


اُلُوْہِیَّت نُبُوَّت کے سوا تُو

تمام اَفضال کا قابل ہے یا غوث


نبی کے قدموں پر ہے جُز نُبُوَّت 

کہ ختم اس راہ میں حائل ہے یاغوث


اُلُوْہِیَّت ہی احمد نے نہ پائی

نُبُوَّت ہی سے تُو عاطِل ہے یا غوث


صحابیّت ہوئی پھر تابِعِیَّت

بس آگے قادِری منزل ہے یاغوث


ہزاروں تابعی سے تو فُزوں ہے

وہ طبقہ مُجْمَلًا فاضل ہے یا غوث


رہا میدان و شہرستانِ عرفاں

تِرا رَمنا تِری محفل ہے یا غوث


یہ چشتیؔ سہروؔردی نقشبندؔی

ہر اِک تیری طرف مائل ہے یا غوث


تِری چڑیاں ہیں تیرا دانہ پانی

تِرا میلہ تِری محفل ہے یا غوث


انھیں تو قادری بیعت ہے تَجْدِید

وہ ہاں خاطی جو مُسْتَبْدِل ہے یا غوث


قمر پر جیسے خور کا یوں تِرا قَرض

سب اہلِ نور پر فاضل ہے یا غوث


غلط کَردَم تُو واہِب ہے نہ مُقْرِض

تری بخشِش تِرا نائل ہے یا غوث


کوئی کیا جانے تیرے سر کا رتبہ

کہ تَلوا تاجِ اہلِ دل ہے یا غوث


مَشایخ میں کسی کی تجھ پہ تَفْضِیل

بحکمِ اَولیا باطل ہے یا غوث


جہاں دشوار ہو وَہمِ مُساوات

یہ جرأت کس قدر ہائل ہے یا غوث

تِرے خُدّام کے آگے ہے اِک بات

جو اور اَقطاب کو مشکل ہے یا غوث

اُسے اِدبار جو مُدْبِر ہے تجھ سے

وہ ذِی اِقبال جو مُقْبِل ہے یا غوث


خدا کے در سے ہے مَطْرُود و مَخْذُول

جو تیرا تارک و خاذِل ہے یا غوث


سِتم کوری وہابی رافضی کی

کہ ہندو تک تِرا قائل ہے یا غوث


وہ کیا جانے گا فضلِ مُرتَضیٰ کو

جو تیرے فضل کا جاہل ہے یا غوث


رضاؔ کے سامنے کی تاب کس میں 

فلک وار اس پہ تیرا ظِلّ ہے یا غوث

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *