Allah Allah Ke Nabi Se Lyrics Urdu/English

Allah Allah Ke Nabi Se Lyrics

Allah Allah Ke Nabi Se Lyrics

By Ala Hazrat Imam Ahmed Raza Khan

Allah Allah Ke Nabi Se
Fariyaad hai nafs ki badi se

Din bhar khelon mein khaak urraayi
Laaj aayi na zarron ki hansi se

Shab bhar sone hi se garaz thi
Taaron ne hazaar daant peese

Imaan pe maut behtar ow nafs
Teri naapaak zindagi se

Oo shahad numa e zehar dar jaam
Gum jaaoon kidhar teri badi se

Allah Allah Ke Nabi Se
Fariyaad hai nafs ki badi se

Gahre pyaare pooraane dil soz
Guzra mein teri dosti se

Tujh se jo uthaaye maine sadme
Aise na mile kabhi kisi se

Uff re khud kaam e be murawwat
Parta hai kaam aadmi se

Tune hi kiya Khuda se naadim
Tune hi kiya khajil Nabi se

Allah Allah Ke Nabi Se
Fariyaad hai nafs ki badi se

Kaise Aaqa ka hukm taala
Ham mar mite teri khud sari se

Aati na thi jab badi bhi tujh ko
Hum jaante hai tujhe jabhi se

Had ke laazim sitam ke kattar
Pathhar sharmaye tere jee se

Hum khaak mein mil chuke hain kab ke
Nikaala na ghubaar tere jee se

Allah Allah Ke Nabi Se
Fariyaad hai nafs ki badi se

Hai zaalim mein niba hun tujh se
Allah bachaaye us ghari se

Jo tum ko na jaanta ho Hazrat
Chaalain chaliye us ajnabi se

Allah ke saamne woh gun the
Yaaron mein kaise muttaqi se

Rehzan ne loot li kamayi
Fariyaad hai khizr e hashmi se

Allah Allah Ke Nabi Se
Fariyaad hai nafs ki badi se

Allah kuwe mein khud gira hun
Apni naalish karun tujhi se

Hain pusht panaah Ghaus e Aazam
Kyun darte ho tum Raza kisi se

Allah Allah Ke Nabi Se
Fariyaad hai nafs ki badi se

اللہ اللہ کے نبی سے

فریاد ہے نفس کی بدی سے


دِن بھر کھیلوں میں خاک اُڑائی

لاج آئی نہ ذرّوں کی ہنسی سے


شب بھر سونے ہی سے غرض تھی

تاروں نے ہزار دانت پیسے


ایمان پہ مَوت بہتر او نفس

تیری ناپاک زندگی سے


او شہد نمائے زہر دَر جام

گُم جاؤں کدھر تِری بدی سے


گہرے پیارے پرانے دِل سوز

گزرا میں تیری دوستی سے


تجھ سے جو اٹھائے میں نے صَدمے

ایسے نہ مِلے کبھی کسِی سے


اُف رے خودکام بے مروّت

پڑتا ہے کام آدمی سے


تُو نے ہی کیا خدا سے نادِم

تُو نے ہی کیا خجِل نبی سے


کیسے آقا کا حکم ٹالا

ہم مر مِٹے تیری خودسری سے


آتی نہ تھی جب بدی بھی تجھ کو

ہم جانتے ہیں تجھے جبھی سے


حد کے ظالم سِتم کے کٹّر

پتھر شرمائیں تیرے جی سے


ہم خاک میں مل چکے ہیں کب کے

نکلا نہ غبار تیرے جی سے


ہے ظالم! میں نِباہوں تجھ سے

اللہ بچائے اُس گھڑی سے


جو تم کو نہ جانتا ہو حضرت

چالیں چلیے اس اَجنبی سے


اللہ کے سَامنے وہ گن تھے

یاروں میں کیسے متقی سے


رہزن نے لُوٹ لی کمائی

فریاد ہے خضر ہاشمی سے


اللہ کنوئیں میں خود گِرا ہوں 

اپنی نالِش کروں تجھی سے


ہیں پُشت پناہ غوثِ اعظم

کیوں ڈرتے ہو تم رضاؔ کسی سے

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *