Arsh Ki Aql Dang Hai Lyrics Urdu/English

Arsh Ki Aql Dang Hai Lyrics

Arsh Ki Aql Dang Hai Lyrics

By Ala Hazrat Imam Ahmed Raza Khan

Arsh ki aql dang hai charkh mein aasmaan hai
Jaan e muraad ab kidhar haaye tera makaan hai

Bazm e sanaa e zulf mein meri ‘uroos e fikr ko
Saari bahaar e hasht khuld chhota sa ‘itr daan hai

Arsh pe jaa ke murgh e aql thak ke gira ghash aa gaya
Aur abhi manzilon pare pehla hi aastaan hai

Arsh ki aql dang hai charkh mein aasmaan hai
Jaan e muraad ab kidhar haaye tera makaan hai

Arsh pe taazah cher chaar farsh mein tarfa dhoom dhaam
Kaan jidhar lagaaiye teri hi daastan hai

Ik tere rukh ki roshni chain hai do jahaan ki
Ins ka uns usi se hai jaan ki woh hi jaan hai

Arsh ki aql dang hai charkh mein aasmaan hai
Jaan e muraad ab kidhar haaye tera makaan hai

Woh jo na the to kuch na tha woh jo na ho to kuch na ho
Jaan hai woh jahaan ki jaan hai to jahaan hai

Gaud mein ‘aalam e shabaab haal e shabaab kuch na pooch
Gulbun e baagh e Noor ki aur hi kuch utthaan hai

Arsh ki aql dang hai charkh mein aasmaan hai
Jaan e muraad ab kidhar haaye tera makaan hai

Tujh sa siyaahkaar kaun un sa shafi’ hai kahaan
Phir woh tujhi ko bhool jaayein dil ye tera gumaan hai

Pesh e nazar wo nau bahaar sajde ko dil hai be qaraar
Rokiye sar ko rokiye haan yahi imtehaan hai

Arsh ki aql dang hai charkh mein aasmaan hai
Jaan e muraad ab kidhar haaye tera makaan hai

Shaan e Khuda na saath de unke kheraam ka woh baaz
Sidrah se taa zameen jise narm si ek uraan hai

Baare jalaal utthaa liya garche kalejaa shaq huwa
Yoon to ye maah e sabzah rang nazron mein dhaan paan hai

Khauf na rakh Raza zara tu to hai ‘abd e ‘Mustafa
Tere liye amaan hai tere liye amaan hai

Arsh ki aql dang hai charkh mein aasmaan hai
Jaan e muraad ab kidhar haaye tera makaan hai

عرش کی عقل دنگ ہے چرخ میں آسمان ہے

جانِ مُراد اب کدھر ہائے تِرا مکان ہے


بزمِ ثنائے زُلف میں میری عروسِ فکر کو

ساری بہارِ ہشت خلد چھوٹا سا عِطر دان ہے


عرش پہ جا کے مرغِ عقل تھک کے گِراغش آ گیا

اور ابھی منزلوں پَرے پہلا ہی آستان ہے


عرش پہ تازہ چھیڑ چھاڑ فرش میں طُرفہ دُھوم دَھام

کان جِدھر لگائیے تیری ہی داستان ہے


اِک ترے رُخ کی روشنی چین ہے دو جَہان کی

اِنس کا اُنس اُسی سے ہے جان کی وہ ہی جان ہے


وہ جو نہ تھے تو کچھ نہ تھا وہ جو نہ ہوں تو کچھ نہ ہو

جان ہیں وہ جہان کی جان ہے تو جہان ہے


گود میں عالمِ شباب حالِ شباب کچھ نہ پوچھ!

گلبنِ باغِ نور کی اور ہی کچھ اُٹھان ہے


تجھ سا سِیاہ کار کون اُن سا شفیع ہے کہاں 

پھر وہ تجھی کو بُھول جائیں دِل یہ تِرا گمان ہے

پیشِ نظر وہ نو بہار سجدے کو دِل ہے بے قرار

روکیے سر کو روکیے ہاں یہی امتحان ہے


شانِ خدا نہ ساتھ دے اُن کے خرام کا وہ باز

سدرہ سے تا زمیں جسے نرم سی اِک اُڑان ہے


بارِ جلال اُٹھا لیا گرچہ کلیجا شق ہُوا

یُوں تو یہ ماہِ سبزہ رنگ نظروں میں دھان پان ہے


خوف نہ رکھ رضاؔ ذرا تو تو ہے عَبدِ مصطفٰی

تیرے لئے اَمان ہے تیرے لئے اَمان ہے

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *