Allah Ki Sar Taba Kadam Shaan Hai Ye Lyrics Urdu/English

Allah Ki Sar Taba Kadam Shaan Hai Ye Lyrics

Allah Ki Sar Taba Kadam Shaan Hai Ye Lyrics

By Ala Hazrat Imam Ahmed Raza Khan

آتے رہے اَنبیا کَمَا قِیْلَ لَھُمْ

وَ الْخَاتَمُ حَقُّکُمْ کہ خاتم ہوئے تم

یعنی جو ہوا دفتر تَنْزِیْل تمَام

آخر میں ہوئی مُہر کہ اَکْمَلْتُ لَکُمْ


شب لحیَہ و شارِب ہے رُخِ رَوشن دن

گیسو و شب قَدْر و براتِ مومن

مِژگاں کی صفیں چار۴ ہیں دو۲ اَبرو ہیں 

وَ الْفَجْر کے پہلو میں لَیَالٍ عَشْرٍ


اللہ کی سر تا بقدم شان ہیں یہ

اِن سا نہیں اِنسان وہ اِنسان ہیں یہ

قرآن تو اِیمان بتاتا ہے انھیں 

اِیمان یہ کہتا ہے مری جان ہیں یہ


بوسہ گہِ اَصحاب وہ مُہر سامی

وہ شانۂ چَپ میں اُس کی عنبر فامی

یہ طُرفہ کہ ہے کعبۂ جان و دِل میں 

سَنگِ اَسود نصیب رکنِ شامی


کعبہ سے اگر تربتِ شہ فاضل ہے

کیوں بائیں طرف اُس کے لئے منزل ہے

اس فکر میں جو دل کی طرف دھیان گیا

سمجھا کہ وہ جسم ہے یہ مرقد دل ہے


تم جو چاہو تو قِسمَت کی مصیبت ٹل جائے

کیوں کر کہوں ساعت سے قیامَت ٹل جائے

لِلّٰہ اُٹھا دو رُخِ روشن سے نِقاب 

مولیٰ مِری آئی ہوئی شامَت ٹل جائے


یاں شبہ شبیہہ کا گزرنا کیسا!

بے مثل کی تِمثال سنورنا کیسا

ان کا متعلق ہے ترقی پہ مُدام

تصویر کا پھر کہیے اُترنا کیسا


یہ شہ کی تواضع کا تقاضا ہی نہیں 

تصویر کِھنچے ان کو گوارا ہی نہیں 

معنی ہیں یہ مانی کہ کرم کیا مانے

کھنچنا تو یہاں کسی سے ٹھہرا ہی نہیں

Aatey rahein Ambiya qamaa qeela lahum
Wal khaatamu haqqukum key khaatam huwe tum
Ya’ani jo huwa daftar e tanzeel tama’am
Aakhir mein huwi mouhar key Akmaltu lakum


Shab lahya woh shaarib hay rukh e raushan din
Gesu o woh shab e Qadr o Baara’at e Momin
Muzgaanmuzragaan ki safein chaar hain do abru hain
Wal fajr pehlu mein Layaalin ashrin


Allah ki sar ta ba qadam shaan hay yeh
In saa nahin insaan woh insaan hain yeh
Qur’an to imaan bataata hay inhein
Imaan yeh kehta hay meri jaan hain yeh


Bosa gahe ashaab woh mouhar e saami
Woh shaanah e chup mein uski ambar faami
Yeah tuarfa kehi hay ka’ba jaan o dil mein
Sange aswad naseeb rukn e shaami


Kaa’be sey agar turbat e shah faazil hay
Kyun baayen taraf uske liye manzil hay
Is fikr mein jo dil ki taraf dhyaan gaya
Samjha ki woh jism hay yah markade dil hay


tum chaaho toh qismat ki museebat tal jaaye
Kyun kar kahun saa’at sey qayamat tal jaaye
Lillaah utthaa do rukh e raushan sey niqaab
Maula meri aayi huwi shaamat tal jaaye


Yaan shibh e shabeeh ka guzarna kaisa!
Be misl ki tamsaal sanwarnaa kaisa
Unka muta’alliq hay taraqqi pey mudaam
Tasweer ka fir kahiye utarna kaisa?!


Yeh Shah ki tawazu’ ka taqaaza hi nahin
Tasweer kheenche unko gawaara hi nahin
Maana hay yeh maani keh karam kya maaney
Kheenchna toh yahaan kisi sey thehra hi nahin

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *