Al Amaan Qeher Hai Aye Ghaus Wo Teekha Tera Lyrics Urdu/English

Al Amaan Qeher Hai Aye Ghaus Wo Teekha Tera Lyrics

Al Amaan Qeher Hai Aye Ghaus Wo Teekha Tera Lyrics

By Ala Hazrat Imam Ahmed Raza Khan

Al amaan qeher hay aay Ghaus woh teekha tera
Mar key bhi chain sey sotaa nahin maara tera

Baadalon sey kahin rukti hay karakti bijlee
Dhaalein cheent jaati hain uthta hay jo tegha tera

Al amaan qeher hay aay Ghaus woh teekha tera
Mar key bhi chain sey sotaa nahin maara tera

Aks ka dekh key munh aur biphar jaata hay
Chaar aaina key bal ka nahin nezaa tera

Koh e sar mukh ho to ek waar mein do par kaale
Haath parta hi nahin bhool key aucha tera

Is pey yeh qeher key ab chand mukhalif tere
Chahate hain key ghata dein kahin paaya tera

Aql hoti to Khuda sey nah laraai lete
Yeh ghataein usey manzoor barhaana tera

Warafa’naa laka zikrak ka hay saaya tujh par
Bol baala hay tera zikr hay ooncha tera

Al amaan qeher hay aay Ghaus woh teekha tera
Mar key bhi chain sey sotaa nahin maara tera

Mit gaye mit te hain mit jaayenge aa’daa tere
Na mitaa hay na mitega kabhi charcha tera

Tu ghataaye sey kisi key na ghata hay na ghatay
Jab barhaaye tujhe Allah Ta’ala tera

Samm e qaatil hay Khuda ki qasam unka inkaar
Munkir e fadl e Huzoor aah ye likkha tera

Mere sayyaaf key khanjar sey tujhe baak nahin
Cheer kar dekhe koi aah kaleja tera

Al amaan qeher hay aay Ghaus woh teekha tera
Mar key bhi chain sey sotaa nahin maara tera

Ibn e Zahra sey tere dil mein hain ye zeher bhare
Bal be ow munkir e be baak yeh zuhra tera

Baaz e ashhab ki ghulaami sey yeh aankhein phirni
Dekh ur jayega imaan ka tota tera

Shaakh par baith key jar kaatne ki fikr mein hain
Kahin neecha na dikhaye tujhe shajra tera

Haq sey bad ho key zamaane ka bhala banta hay
Are main khoob samajhta hoon mua’mma tera

Al amaan qeher hay aay Ghaus woh teekha tera
Mar key bhi chain sey sotaa nahin maara tera

Sag e dar qeher sey dekhe to bikharta hay abhi
Band band e badan aay roobeh duniya tera

Gharz aaqa sey karoon arz key teri hay panaah
Bandah majboor hay khaatir pe hay qabza tera

Hukm e naafiz hay tera khaamah tera saif teri
Dam main jo chaahe kare dor hay shahaa tera

Jis ko lalkaar de aata to ultaa phir jaaye
Jis ko chamkaar le har phir key woh tera tera

Al amaan qeher hay aay Ghaus woh teekha tera
Mar key bhi chain sey sotaa nahin maara tera

Kunjiyan dil ki Khuda ne tujhe dein aisi kar
Ke yeh seena ho mohabbat ka khazeena tera

Dil pe kundah ho tera naam key wo duzd e rajeem
Ulte hi paaon phire dekh key tughra tera

Naz’aa mein gor mein meezaan pe sar e pul pe kahin
Na chutay haath say daamaan e mu’alla tera

Dhoop mahshar ki woh jaan soz qayaamat hay magar
Mutmain hoon key mere sar pe hay pallaa tera

Al amaan qeher hay aay Ghaus woh teekha tera
Mar key bhi chain sey sotaa nahin maara tera

Bahjat is sir ki hay jo bahjatul asraar mein hay
Ke falak waar mureedon pe hay saaya tera

Aay Raza cheest e gham ar jumlah jahan dushman e tust
Kardah am maamane khud qibla e haajaa tera

Al amaan qeher hay aay Ghaus woh teekha tera
Mar key bhi chain sey sotaa nahin maara tera

الاماں قہر ہے اے غوث وہ تِیکھا تیرا 

مر کے بھی چین سے سوتا نہیں مارا تیرا


بادلوں سے کہیں رُکتی ہے کڑکتی بجلی 

ڈھالیں چھنٹ جاتی ہیں اُٹھتا ہے جو تیغا تیرا


عکس کا دیکھ کے منھ اور بپھَر جاتا ہے 

چار آئینہ کے بل کا نہیں نیزا تیرا


کوہ سَرمُکھ ہو تو اِک وار میں دو پرَ کالے 

ہاتھ پڑتا ہی نہیں بھول کے اوچھا تیرا


اس پہ یہ قہر کہ اب چند مخالِف تیرے 

چاہتے ہیں کہ گھٹا دیں کہیں پایہ تیرا


عَقْل ہوتی تو خدا سے نہ لڑائی لیتے 

یہ گھٹائیں اسے منظور بڑھانا تیرا


وَرَفَعْنَا لَکَ ذِکْرَکْ کا ہے سایہ تجھ پر 

بول بالا ہے تِرا ذِکر ہے اُونچا تیرا


مِٹ گئے مِٹتے ہیں مِٹ جائیں گے اَعدا تیرے 

نہ مِٹا ہے نہ مِٹے گا کبھی چرچا تیرا


تُو گھٹائے سے کسی کے نہ گھٹا ہے نہ گھٹے 

جب بڑھائے تجھے اللّٰہ تعالیٰ تیرا


سَمِّ قاتل ہے خدا کی قَسَم اُن کا اِنکار 

مُنکرِ فَضْلِ حُضُور آہ یہ لکھا تیرا


میرے سَیَّاف کے خنجر سے تجھے باک نہیں 

چِیر کر دیکھے کوئی آہ کلیجا تیرا


ابنِ زَہرا سے ترے دل میں ہیں یہ زہر بھرے 

بَل بے اَو مُنکرِ بے باک یہ زَہرا تیرا


بازِ اَ شْہَب کی غلامی سے یہ آنکھیں پھرنی 

دیکھ اُڑ جائے گا ایمان کا طوطا تیرا


شاخ پر بیٹھ کے جڑ کاٹنے کی فِکْر میں ہے 

کہیں نیچا نہ دکھائے تجھے شجرا تیرا


حق سے بد ہو کے زمانہ کا بھلا بنتا ہے 

ارے میں خُوب سمجھتا ہوں مُعَمَّا تیرا


سگِ دَر قہر سے دیکھے تو بِکھرتا ہے ابھی 

بندْ بندِ بدن اے رُوبۂ دنیا تیرا


غَرض آقا سے کروں عَرْض کہ تیری ہے پناہ 

بندہ مجبور ہے خاطِر پہ ہے قبضہ تیرا


حُکْم نافِذ ہے تِرا خامَہ تِرا سیف تِری 

دم میں جو چاہے کرے دَور ہے شاہا تیرا


جس کو للکار دے آتا ہو تو اُلٹا پھر جائے 

جس کو چَمکار لے ہر پھر کے وہ تیرا تیرا

 

کنجیاں دل کی خدا نے تجھے دِیں ایسی کر 

کہ یہ سینہ ہو محبت کا خزینہ تیرا


دِل پہ کندہ ہو ترا نام کہ وہ دُزدِ رَجیم 

اُلٹے ہی پاؤں پِھرے دیکھ کے طُغرا تیرا


نزع میں، گَور میں، ِمیزاں پہ، سرِ پُل پہ کہیں 

نہ چُھٹے ہاتھ سے دامانِ مُعلّٰی تیرا


دُھوپ محشر کی وہ جاں سَوز قیامت ہے مگر 

مطمئن ہوں کہ مِرے سر پہ ہے پلّا تیرا


بہجت اس سِر کی ہے جو ’’ بَہْجَۃُ الْاَسْرَار‘‘ میں ہے 

کہ فَلک وار مُریدوں پہ ہے سایہ تیرا


اے رضاؔ چیست غم ار جملہ جہاں دُشمنِ تُست 

کردَہ اَم ما مَنِ خود قِبلَۂ حاجاتے را

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *